دلائی لامہ پر ہندوستان کا موقف درست : للت مان سنگھ

بھارت

دلائی لامہ پر ہندوستان کا موقف درست : للت مان سنگھ

تبت کے روحانی رہنما دلائی لامہ کے اروناچل پردیش کے دورے پر ہندوستان کے رخ کو درست قرار دیتے ہوئے سابق خارجہ سکریٹری للت مان سنگھ نے کہا ہے کہ ''چین طاقت کے آگے ہی جھکتا ہے ''۔مسٹر سنگھ نے یو این آئی کے ساتھ بات چیت میں کہا کہ ''چین طاقت کا احترام کرتا ہے ۔ وہ نرمی اور اخلاقیات پر زیادہ توجہ نہیں دیتا''۔ انہوں نے کہا کہ دلائی لامہ کے اروناچل کے دورے پر ہندوستان کا موقف چین کے تئیں ہندوستانی سرکار کی مضبوطی اور اقتدار اعلی کا مظاہرہ ہے ورنہ اکثر ہم کمزوری اور دفاعی انداز ہی اختیار کرتے ہیں۔سابق خارجہ سکریٹری نے کہا ''مجھے یہ اچھا لگا۔ ایسا بہت عرصہ بعد ہوا۔ میرا خیال ہے کہ یہ ٹھوس رویہ برقرار رہنا چاہیے ''۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ایک مرکزی وزیر (کرن رجیجو) کا دلائی لامہ کے اروناچل میں قیام کے دوران وہاں رہنا قابل تعریف اقدام ہے ۔یہ اچھا ہے اس لئے تبت کا نام لینے سے بچنے پر بھی ہندوستان اور چین کے تعلقات میں کوئی خاص بہتری نہیں آئی۔قابل ذکر ہے کہ وزارت خارجہ نے اس وقت مضبوطی کے ساتھ کہا تھا کہ دلائی لامہ کے اروناچل پردیش کے دورے کو لیکر ''مصنوعی تنازہ'' پیدا نہیں کیا جانا چاہیے ۔ تب کے 82 سالہ روحانی رہنما اس ماہ کے اوائل میں اروناچل کے دورے پر آئے تھے ۔ چین نے یہ کہہ کر اس کی مخالفت کی تھی کہ یہ دورہ دو طرفہ تعلقات کو مضبوط کرنے کے آڑے آئے گا اور اس سے ہندوستان کو کسی طرح کا فائدہ نہیں ہوگا۔چین کے اعتراض کو نظر انداز کرتے ہوئے ہندوستانی سرکار نے اپنے موقف پر قائم رہ کر واضح کیا کہ سیکولر ملک کے طور پر وہ ایک روحانی لیڈر کے اروناچل پردیش سمیت ملک کے کسی بھی حصہ کے دورے کو نہیں روک سکتے ۔مسٹر رجیجو نے اس وقت کہا تھا کہ اروناچل پردیش متنازعہ علاقہ نہیں ہے ۔ وہاں کے لوگ امن پسند ہندوستانی ہیں جو سب کے پاس دوستانہ تعلقات چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا تھا ''اس دورے کے پیچھے کوئی سیاسی مقصد نہیں ہے یہ پوری طرح مذہبی ہے ۔ہندوستانی سرکار کا کہنا ہے کہ دلائی لامہ اس سے پہلے بھی چھ مرتبہ ہندوستان کے دورے پر آچکے ہیں۔ مسٹر رجیجو نے چین سے اپیل کی تھی کہ وہ دلائی لامہ کے سفر کو ''سیاسی طول نہ دے ۔ ایک دیگر سوال کے جواب میں مسٹر مان سنگھ نے کہا کہ خود دلائی لامہ نے بھی اس بات کا ذکر کیا تھا کہ اتنے سال بعد ہندوستان کو تبت کے معاملہ پر چین کے تئیں سخت موقف اپنانے کی ضرورت ہے ۔

Similar Posts

Share it
Top