الیکشن کمیشن کا اننت ناگ لوک سبھا ضمنی انتخاب منسوخ

بھارت

نئی دہلی، الیکشن کمیشن نے جموں و کشمیر کے اننت ناگ لوک سبھا سیٹ کا ضمنی انتخاب منسوخ کر دیا ہے۔
کمیشن نے کل دیر رات جاری حکم میں ضمنی انتخاب کرانے کے اپنے نوٹی فیکیشن منسوخ کرتے ہوئے کہا کہ اننت ناگ حلقے میں ماحول انتخاب کرانے کے موافق نہیں ہے۔ اس حلقہ میں 25 مئی کو پولنگ ہونی تھی۔ کمیشن نے پہلے وہاں 12 اپریل کو پولنگ کرانے کا اعلان کیا تھا لیکن جموں و کشمیر انتظامیہ اور انتخابی حکام کی رپورٹوں کی بنیاد پر اس کی تاریخ آگے بڑھا کر 25 مئی کر دی تھی۔ اس وقت کمیشن نے کہا تھا کہ انتظامیہ کے مطابق وہاں انتخاب کرانے کے لئے مناسب ماحول نہیں ہے۔
اننت ناگ لوک سبھا سیٹ محترمہ محبوبہ مفتی کے جموں و کشمیر کی وزیر اعلی بننے سے خالی ہوئی ہے۔
الیکشن کمیشن نے مرکزی وزارت داخلہ سے انتخاب کے دوران قانون کا نظام برقرار رکھنے کے لئے زیادہ سیکورٹی فورسز کی مانگ کی تھی لیکن وزارت نے اس میں معذوری ظاہر کی جس کے بعد انتخاب کا نوٹیفکیشن منسوخ کئے جانے کا فیصلہ کیا گیا۔ کمیشن کے مطابق مئی میں رمضان، امرناتھ یاترا اور سیاحتی موسم ہونے کی وجہ سے بھی یہ انتخاب کرانا مناسب نہیں ہوگا۔
وادی میں نو اپریل کو سرینگر ضمنی انتخابات کے دوران سیکورٹی فورسز اور مظاہرین کے درمیان جھڑپ میں آٹھ افراد ہلاک ہو گئے تھے اور محض سات فیصد پولنگ ہوئی تھی۔ اس کے پیش نظر الیکشن کمیشن نے 12 اپریل کو ہونے والے اننت ناگ ضمنی انتخاب کو ملتوی کر دیا۔ ریاست میں حکمراں پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی نے دھمکی دی تھی کہ اگر ان انتخاب کو ملتوی نہیں کیا گیا تو وہ اپنی امیدواری واپس لے لے گی۔ اس کے بعد الیکشن کمیشن نے 25 مئی کی تاریخ مقرر کی تھی۔
الیکشن کمیشن نے مطالبہ کیا تھا کہ وزارت داخلہ 10 مئی سے پہلے 36000 سیکورٹی فورسز کو وادی میں تعینات کرے۔ حکومت نے کہا کہ الیکشن کمیشن کی مانگ ماننا ناممکن ہے، کیونکہ اتنے کم وقت میں اتنی بڑی تعداد میں سیکورٹی فورسز کو ایک جگہ سے دوسری جگہ بھیجنا ممکن نہیں ہے۔ اس کے علاوہ مسلسل ایک جگہ سے دوسری جگہ بھیجے جانے کی وجہ سے سیکورٹی فورسز کافی تھکاوٹ اور دباؤ میں ہیں۔

Similar Posts

Share it
Top